تازہ ترین

شیعہ نیوز (پاکستانی شیعہ خبر رساں ادارہ) مجلس وحدت مسلمین پاکستان گلگت بلتستان کے سربراہ آغا علی رضوی نے کہا ہے کہ فلسطین میں جاری اسرائیلی جارحیت کے خلاف عالم انسانیت اور عالم اسلام کی جانب سے مذمت کرنے کا وقت ختم ہوچکا ہے اور اب عملی اقدامات کا وقت آچکا ہے۔ ستر سالوں سے قبلہ اول غاصب صیہونیوں کے قبضے میں ہے اور بے گناہ فلسطینیوں کے خون کی ہولی کھیلی جارہی ہے۔ اسرائیل جارحیت و مظالم کو روکنے کے لیے مسلمانوں کو متحد ہو ر فلسطین کی مزاحمتی تحریکوں کا ساتھ دینا ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ اسرائیل عالم اسلام کے قلب پر خنجر کی مانند ہے۔ اسرائیل ایک ایسا ناسور ہے جس سے نہ صرف مشرق وسطیٰ کے لیے خطرہ لاحق ہے بلکہ عالم انسانیت کے لیے خطرہ ہے۔ آغا علی رضوی نے کہا کہ ستر سالوں سے مسئلہ فلسطین پر اقوام متحدہ خاموش تماشائی کا کردار ادا کررہی ہے۔ او آئی سی بھی مسئلہ فلسطین کو حل کرنے کے لیے سنجیدہ نظر نہیں آتی۔ اسرائیلی مظالم پر خاموش رہنے اور اسرائیل کے ساتھ خفیہ طور پر سفارتی تعلقات قائم رکھنے والے نام نہاد اسلامی ممالک کا ہاتھ بھی مظلوم فلسطینیوں کے خون سے رنگین ہے۔ پاکستان کو بھی عالمی سطح پر سرائیل پر دباو بڑھانے اور مسئلہ فلسطین کو حل کرنے کے لیے سنجیدہ کوشش جاری رکھنی چاہیے۔

انہوں نے کہا کہ یوم القدس یوم مستضعفین جہان ہے اور فلسطین مسلمان مزاحمت و مقاومت کا استعارہ ہے۔ انکی مزاحمت سے پوری دنیا کے مظلومین کو درس حریت و مقاومت ملتا ہے۔ آج کشمیر کے مظلومین ہو یا یمن و بحرین کے مظلومین ان سب کے لیے فلسطین مزاحمت کے لیے سر مشق ہے۔ انکی نہ تھکنے والی جدوجہد سے دوسرے مظلومین کے لیے توانائی ملتی ہے۔ آج فلسطین کے مسلمانوں کے ساتھ دنیا کے بھر مظلومین کے حق میں آواز بلند کرنا یوم القدس کا اصل فلسفہ ہے۔ آغا علی رضوی نے کہا کہ ہمیں فلسطین کے ساتھ کشمیری مسلمانوں کے لیے آواز بلند کرنی چاہیے۔ انڈیا جہاں اسرائیل کا اتحادی ملک ہے وہیں ہندوستان جنوبی ایشیاء میں اسرائیل کا کردار ادا کررہا ہے۔ ہندوستان کی ظالمانہ تاریخ بھی ستر سالوں پر محیط ہے۔ امریکہ و اسرائیل جنوبی ایشیاء میں اپنے ایجنڈے ہندوستان کے ذریعے مکمل کرنا چاہتا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ اسرائیلی وزیراعظم کی آمد پر ہندوستانی عوام نے احتجاج کر ے اپنی ریاست کو پیغام دیا کہ عوام انسانیت پر جاری مظالم پر خاموش نہیں رہ سکتے۔

شیعہ نیوز (پاکستانی شیعہ خبر رساں ادارہ) مجلس وحدت مسلمین کراچی کے سیکریٹری اطلاعات سید احسن عباس رضوی نے کراچی سمیت سندھ کے مختلف حصوں میں بجلی کی طویل دورانیے کی غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ پر شدید ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ سندھ خصوصاً کراچی میں جاری بجلی کے مصنوعی بحران کا جلد خاتمہ نہ ہونے کی صورت میں پہلے مرحلے میں آگہی و تشہیری مہم اور دوسرے مرحلے میں احتجاجی مہم کا آغاز کریں گے، انہوں نے وفاقی وزیر بجلی و پانی اور چیف جسٹس آف پاکستان سے کراچی میں غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ کا نوٹس لینے کا مطالبہ کیا ہے۔ اپنے مذمتی بیان میں احسن رضوی نے کہا کہ سندھ حکومت عوام کو سہولیات کی فراہمی کی بجائے آئے دن ان کی مشکلات میں اضافے کا باعث بن رہی ہے، کراچی میں گرمی کے آغاز کے ساتھ ہی بارہ بارہ گھنٹے بجلی کی بندش حکومت کی ’’مثالی کارکردگی‘‘ پر سوالیہ نشان ہے۔ انہوں نے کہا کہ کراچی سمیت صوبے بھر میں میٹرک کے امتحانات کا آغاز ہو چکا ہے اور کے الیکٹرک کی ’’مہربانیاں‘‘ طلباء و طالبات کی تیاری کے دوران ان کیلئے درد سر بنی ہوئی ہیں۔

احسن عباس رضوی نے کہا کہ ناعاقبت اندیش حکمرانوں اور کے الیکٹرک انتظامیہ نے گذشتہ سالوں میں ہیٹ اسٹروک اور لوڈشیڈنگ کے باعث قیمتی انسانی جانوں کے ضیاع سے سبق نہیں سیکھا، عوام کو صاف پانی، بجلی، گیس، صحت و صفائی اور تعلیم جیسی بنیادی سہولیات کی فراہمی حکومت کی آئنی ذمہ داری ہے، لیکن ہر دور میں بے حس حکمرانوں نے اپنی ذمہ داریوں کی ادائیگی کے بجائے انہیں اخباری دعوؤں تک ہی محدود رکھا۔ انہوں نے کہا کہ عوامی جماعت ہونے کی دعویدار پیپلز پارٹی کی سندھ حکومت کی طرف سے عوام کیلئے کھڑی کی جانے والی مشکلات آئندہ عام انتخابات میں جماعت کی مقبولیت کیلئے سخت نقصان دہ ثابت ہوں گی۔ رہنما ایم ڈبلیو ایم نے مطالبہ کیا کہ سندھ حکومت لوڈشیڈنگ پر قابو پانے کیلئے ترجیحی بنیادوں پر اقدامات کرے۔

شیعہ نیوز (پاکستانی شیعہ خبر رساں ادارہ) مجلس وحدت مسلمین سندھ کے سیکرٹری جنرل علامہ مقصود علی ڈومکی نے کہا ہے کہ اسلام دشمن اسرائیلی وزیراعظم نیتن یاہو کے دورہ بھارت سے وطن عزیز پاکستان اور امت مسلمہ کے خلاف نئی سازش کی بو آرہی ہے، سر زمین کشمیر اور فلسطین پر قابض غاصب ریاستوں کا گٹھ جوڑ، امت مسلمہ کے لئے لمحہ فکریہ ہے، امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے اسلام دشمن عزائم کے بعد، دو اسلام دشمن اور پاکستان دشمن ریاستوں کی قربت ہمیں بہت کچھ سوچنے پر مجبور کر رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ اسرائیلی وزیراعظم کے دورہ بھارت کے خلاف، ہندوستانی مسلمانوں نے احتجاج کرکے غیرت ایمانی کا ثبوت دیا ہے، پاکستان کے غیور عوام بھی فلسطین اور کشمیر کے مظلوم مسلمانوں سے یکجہتی کا اظہار کریں۔

انہوں نے کہا کہ مجلس وحدت مسلمین نے ہمیشہ مظلوم کشمیری اور فلسطینی مسلمانوں کے حق میں آواز بلند کی ہے، ہم اس منحوس مثلث کے خلاف اب بھی بھرپور آواز بلند کریں گے۔ انہوں نے وطن کے باوفا بیٹوں اور غیور مسلمانوں سے اپیل کی کہ وہ اسرائیلی وزیراعظم کے چھ روزہ دورے اور اسلام دشمن منصوبوں کے خلاف بھرپور آواز بلند کریں۔ انہوں نے کہا کہ انشاء اللہ کشمیر اور فلسطین ضرور آزاد ہوگا اور ظلم کی سیاہ رات کا خاتمہ ہوگا۔

شیعہ نیوز (پاکستانی شیعہ خبر رساں ادارہ) مجلس وحدت مسلمین پنجاب کے سیکرٹری جنرل علامہ مبارک علی موسوی نے کہا ہے کہ شہدائے ماڈل ٹائون کا لہو رنگ لائے گا، جس معاشرے میں انصاف ناپید ہو وہاں حصول انصاف کی جدوجہد میں ساتھ دینا اور ظالموں کو انجام تک پہنچانا ہر ذی شعور انسان پر فرض ہے۔

انہوں نے کہا کہ مجلس وحدت مسلمین کے رہنما اور وزیرقانون بلوچستان سید محمد رضا نے عوامی خدمت میں مثالی کردار ادا کیا، انہوں نے آج ہماری قیادت اور کارکنان کے سر فخر سے بلند کر دیئے ہیں،ان شاءاللہ قومی سیاست میں مجلس وحدت مسلمین مستقبل میں بھی کلیدی کردار ادا کرے گی۔ انہوں نے کہا کہ پنجاب حکومت اور آل شریف عوام کو ریلف دینے میں ناکام ہو چکے ہیں، قصور میں مظلوم ننھی بچی زینب کے قاتل کا تاحال سراخ نہ ملنا پنجاب حکومت کے ماتھے پر کلنک کا ٹیکہ ہے، ہم مظلوموں کی حامی جماعت ہیں، مظلوم خواہ غیر مسلم ہی کیوں نہ ہو ہم اس کے مددگار ہیں اور ظالم خواہ مسلمان ہی کیوں نہ ہو اس کے کیخلاف قیام کرنا ہمارا دینی اخلاقی اور انسانی فریضہ ہے اور یہی مجلس وحدت مسلمین کا منشور بھی ہے۔

شیعہ نیوز (پاکستانی شیعہ خبر رساں ادارہ) مجلس وحدت مسلمین جنوبی پنجاب کی دو روزہ تربیتی و تنظیمی ورکشاپ جامعہ شہید مطہری ملتان میں اختتام پذیر ہوگئی، ورکشاپ میں مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے ڈپٹی سیکرٹری جنرل علامہ احمد اقبال رضوی، ڈپٹی سیکرٹری جنرل سید ناصر عباس شیرازی اور مرکزی رہنما علامہ اعجاز حسین بہشتی نے خصوصی طور پر شرکت کی۔ ورکشاپ میں جنوبی پنجاب کے تمام اضلاع بشمول ملتان، مظفرگڑھ، علی پور، لیہ، بھکر، رحیم یارخان، میانوالی اور لودھراں کے سیکرٹری جنرل اور ضلعی کابینہ کے افراد نے شرکت کی۔ بعدازاں صوبائی کابینہ کا اجلاس منعقد ہوا، اجلاس کی صدارت صوبائی سیکرٹری جنرل علامہ اقتدار حسین نقوی نے کی، اجلاس میں صوبائی ڈپٹی سیکرٹری جنرل سلیم عباس صدیقی، محمد اصغر تقی، سیکرٹری تنظیم سازی ناصر عباس، سیکرٹری سیاسیات مہر سخاوت علی، سیکرٹری تربیت سید وسیم عباس زیدی، سیکرٹری فلاح و بہبود سید زعیم زیدی، صوبائی ترجمان ثقلین نقوی، ندیم عباس کاظمی، سید عدیل زیدی، مولانا ہادی حسین ہادی اور اظہر کاظمی موجود تھے۔ اجلاس میں خصوصی طور پر مرکزی ڈپٹی سیکرٹری جنرل علامہ احمد اقبال رضوی نے شرکت کی۔ اجلاس میں صوبے کے مختلف ایشوز پر اظہار خیال کیا گیا۔

اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے علامہ احمد اقبال رضوی کا کہنا تھا کہ ایم ڈبلیو ایم کی بلوچستان میں سیاسی کامیابی تاریخ ساز ہے، خدا نے اہلیان کوئٹہ اور مظلومین پاکستان کو آغا رضا کی شکل میں عزت سے نوازا ہے، اُنہوں نے کہا کہ ملک کے دیگر صوبوں اور شہروں میں عوام کو اپنی طاقت کا احساس کرنا چاہیے، اگر اہلیان علمدار روڈ اپنی طاقت کے ذریعے سے پارلیمنٹ میں اپنی آواز پہنچا سکتے ہیں تو باقی لوگ کیوں نہیں؟ اُنہوں نے کہا کہ انشاء اللہ اگلے الیکشن میں قوم سے توقعات وابستہ ہیں، سانحہ قصور جیسے واقعات حکومت اور حکمرانوں کے لیے لمحہ فکریہ ہیں، حکومت میں موجودکرپٹ وزراء اور مشیر ملک میں جاری بدامنی کے ذمہ دار ہیں۔ اُنہوں نے کہا کہ اگر سانحہ ماڈل ٹائون کے شہدا ء کو انصاف ملتا تو شاید قصور میں زینب کی عصمت دری نہ ہوتی۔

شیعہ نیوز (پاکستانی شیعہ خبر رساں ادارہ) مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے مرکزی سیکرٹری جنرل علامہ راجہ ناصر عباس جعفری نے کہا ہے کہ سانحہ ماڈل ٹاؤن کے حوالے سے جسٹس باقر نجفی رپورٹ کو منظر عام پر لایا جائے، 2018ء کے عام انتخابات میں مسلم لیگ (ن) کی بدترین شکست واضح طور پر دکھائی دے رہی ہے، ایم ڈبلیو ایم آئندہ عام انتخابات میں بھرپور حصہ لے گی۔

اپنے ایک بیان میں علامہ راجہ ناصر عباس جعفری نے کہا کہ قانون و انصاف کی بالادستی کے بغیر ملک میں امن و امان کا حقیقی قیام ممکن نہیں، اختیارات اور طاقت کے ناجائز استعمال نے عدم تحفظ کے احساس اور بدامنی کو تقویت دی ہے، ملک کے ہر فرد کو انصاف تک رسائی ہونی چاہیے، دہشت گردی کے واقعات میں ملوث تمام مجرموں کو بلاتخصیص کیفر کردار تک پہنچایا جائے، حکمرانوں نے سانحہ ماڈل ٹاؤں کی شکل میں ریاستی دہشت گردی کی بدترین مثال رقم کی ہے، پاکستان کی تاریخ میں اس طرح کے ریاستی جبر کی اس سے قبل مثال نہیں ملتی، سانحہ ماڈل ٹاؤن میں ملوث تمام مجرمان کو قانون کے مطابق سزا ملنا عدل و انصاف کا تقاضہ ہے، انصاف کی فراہمی میں تاخیر مجرمان کے ساتھ رعایت سمجھی جاتی ہے۔

علامہ راجہ ناصر عباس جعفری نے کہا کہ شہدائے ماڈل ٹاؤن کے لواحقین انصاف کے منتظر ہیں، جسٹس باقر نجفی رپورٹ کو منظر عام پر لایا جائے، تاکہ عوام حقائق سے آگاہ ہوں، سانحہ ماڈل ٹاؤن کے مجرمان کو سزا ملنا ملک میں قانون و انصاف کی حاکمیت کا نقارہ سمجھا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ مجلس وحدت مسلمین انصاف کے حصول کیلئے پاکستان عوامی تحریک کی جدوجہد کی حمایت جاری رکھے گی، 2018ء کے عام انتخابات میں مسلم لیگ (ن) کی بدترین شکست واضح طور پر دکھائی دے رہی ہے۔

انہوں نے کہا کہ ایم ڈبلیو ایم آئندہ عام انتخابات میں بھرپور حصہ لے گی، مظلومین کی حمایت اور ظالموں کی مخالفت ہمارے تنظیمی منشور کا حصہ ہے، الیکشن میں ظالموں کے ساتھ ہمارا اتحاد کسی بھی صورت ممکن نہیں۔

شیعہ نیوز (پاکستانی شیعہ خبر رساں ادارہ) مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے مرکزی ترجمان علامہ مختار امامی نے کہا ہے کہ پاکستان کا سترواں یوم آزادی ملی جوش و جذبے کے ساتھ منایا جائے گا، آزادی کی تقریبات کے حوالے سے ہم نے تیاریاں شروع کر رکھی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ایم ڈبلیو ایم ایک محب وطن جماعت ہے اور ملک دشمن تکفیریوں کے خلاف ہمیشہ آواز بلند کرتی آئی ہے، سندھ کی سرزمین جو ہمیشہ امن و محبت کا گہوارہ رہی ہے گذشتہ چند سالوں سے ایک سازش کے تحت یہاں دہشت گردوں کے مراکز اور سہولت کار پیدا کئے گئے ہیں۔

علامہ مختار امامی نے علامہ عارف حسین الحسینی کی 29ویں برسی اور ملکی موجودہ سیاسی صورتحال کے حوالے سے منعقدہ ایم ڈبلیو ایم کی جانب سے مہدی برحق کانفرنس کے شاندار انعقاد پر شرکاء کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ ملت تشیع نے ہزاروں کی تعداد میں شرکت کرکے یہ ثابت کیا ہے کہ ہم وہ زندہ و بیدار قوم ہیں جو اپنے محسنوں کو فراموش نہیں کرتی۔

انہوں نے اسلام آباد کی انتظامیہ کو بہترین سیکورٹی فراہم کرنے اور میڈیا احباب کا بہترین کوریج پر بھی شکریہ ادا کیا۔ انہوں نے کہا کہ وطن عزیز کے استحکام کے لئے اتحاد امت انتہائی ضروری ہے، شیعہ سنی علماء کی طرف سے تکفیری گروہوں کی حوصلہ شکنی نے یہ ثابت کیا ہے کہ پاکستان میں تکفیریت کی کوئی گنجائش نہیں، جو قوتیں تکفیریت کو پروان چڑھانا چاہتی ہیں انہیں شیعہ سنی وحدت اپنے مذموم مقاصد میں کبھی کامیاب نہیں ہونے دے گی۔

شیعہ نیوز (پاکستانی شیعہ خبر رساں ادارہ) مجلس وحدت مسلمین پنجاب کے سیکرٹری جنرل علامہ سید مبارک علی موسوی کا صوبائی کابینہ کے اجلاس سے خطاب میں کہنا تھا کہ اسلام آباد پریڈ گراؤنڈ میں کامیاب تاریخی "مہدی برحق کانفرنس" کا انعقاد ہمارے جانباز اور نڈر کارکنان کی انتھک محنت اور خداوند متعال کے خاص لطف و کرم کا نتیجہ ہے، ہم اس تاریخی کانفرنس کی انعقاد پر قائد وحدت علامہ راجہ ناصر عباس اور جانثار کارکنان کو مبارکباد پیش کرتے ہیں، سنٹرل پنجاب سے ہزاروں مرد و خواتین نے موسم اور سفر کی صعوبتوں کو بالائے طاق رکھ کر شرکت کرکے مجلس وحدت مسلمین کے قائدین اور شہید قائد علامہ عارف حسین الحسینی سے اپنے والہانہ محبت و عقیدت کا اظہار کیا، ان شاء اللہ ہم ارض پاک سے ملک دشمن دہشتگردوں اور کرپٹ مافیا کے خاتمے تک چین سے نہیں بیٹھیں گے۔

انہوں نے کہا کہ مجلس وحدت مسلمین کا یہ منشور ہے کہ ہم ہر ظالم و جابر کیخلاف آہنی دیوار اور ہر مظلوم کے دست بازو بنیں گے، ہم اپنے شہداء ارض پاک کے پاکیزہ لہو کو رائیگاں نہیں جانے دینگے۔

انہوں نے کہا ہمارے محبوب قائد شہید علامہ عارف حسین الحسینی کی شہادت کا سبب حب الوطنی اور مسلم امہ کے درمیان وحدت کا پیغام عام کرنا تھا، پاکستان میں ملت تشیع کے قتل عام کا اصل مطلب یہ ہے کہ وہ اس ملک کے فطری دفاع اور دفاعی فرنٹ لائن کو ختم کرنا چاہتے ہیں، لیکن یہ ان کی خام خیالی ہے۔ انہوں نے کہا کہ چودہ سو سال سے ہمارا قتل عام جاری ہے لیکن ہم نے ظالموں اور جابروں کے سامنے اپنے سر جھکانے سے سر کٹانے کو ترجیح دی ہے، ہمارا یہ ایمان ہے کہ شہادت ہمارا ورثہ ہے جو ہماری ماوُں نے ہمیں دودھ میں پلایا ہے، وطن عزیز کی سلامتی و دفاع کیلئے اپنی جانوں کا نذرانہ دینا ہمارے ایمان کا حصہ ہے۔

اجلاس میں پروفیسر ڈاکٹر افتخار نقوی، علامہ ملازم نقوی، علامہ حسن ہمدانی، سید حسن کاظمی، سید حسین زیدی، رائے ناصر علی، رانا ماجد علی سمیت دیگر رہنماؤں اور کارکنان کی بڑی تعداد نے شرکت کی۔

شیعہ نیوز (پاکستانی شیعہ خبر رساں ادارہ) جمعیت علمائے پاکستان (نیازی) کے مرکزی رہنما سید معصوم نقوی نے کہا ہے کہ علامہ عارف حسینی کی شہادت شیعہ سنی دونوں کے لیے یکساں نقصان تھا۔ وہ اتحاد امت کے داعی تھے، ان کے بعد علامہ ناصر عباس جعفری نے ان کے مشن کو پروان چڑھایا ہے جو خوش آئندہ بات ہے، ان خیالات کا اظہار انہوں نے ایم ڈبلیو ایم کے زیراہتمام پریڈ گراونڈ میں مہد برحق کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔

انہوں نے کہا کہ مجلس وحدت مسلمین نے غیرمشروط انداز میں شیعہ سنی افراد کو ایک دوسرے کے قریب کیا۔ ڈاکٹر امجد حسین چشتی نے کہا کہ آج اس اسٹیج پر شیعہ سنی علما کا اجتماع اس حقیقت کا عکاس ہے کہ شیعہ سنی میں کوئی اختلاف نہیں۔ ہمارے درمیان مضبوط برادرانہ تعلقات ہمیشہ قائم رہیں گے۔ جمیعت علمائے اسلام کے مرکزی رہنما پیر عثمان نوری نے کہا کہ شیعہ سنی قوتوں نے مل کر اس ملک کی حفاظت کرنی ہے۔

اتحاد امت مصطفے کے صدر پیر شفاعت رسول نوری نے کہا کہ اتحاد امت کے لیے علامہ راجہ ناصر عباس جعفری کا اخلاص لائق تحسین ہے، ہم اس اتحاد کے فارمولے کو تسلیم نہیں کرتے جس میں ظالم و مظلوم کو ایک صف میں کھڑا کیا جائے۔ ہمارے پاس اتحاد کا فارمولا محبت محمدﷺ و آل محمد ﷺ ہے۔ پاکستان کے سیاسی، مذہبی اور علمی حلقے یہ بات ذہن نشین کر لیں کہ پاکستان کی بنیاد دو قومی نظریہ ہے، اس سے انحراف پاکستان کی بقا کو خطرے میں ڈال سکتا ہے۔

شیعہ نیوز (پاکستانی شیعہ خبر رساں ادارہ) مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے زیراہتمام شہید قائد علامہ عارف حسین الحسینی کی 29ویں برسی کے سلسلے میں مہدی ؑ برحق کانفرنس کا انعقاد پریڈ گراؤنڈ اسلام آباد میں ہوا، جس میں ملک کے نامور علماء، مذہبی و سیاسی رہنماؤں اور ہزاروں کی تعداد میں کارکنان، خواتین اور بچوں نے شرکت کی۔

کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے گلگت بلتستان اسمبلی کے رکن ڈاکٹر رضوان نے کہا کہ ملک دشمن طاقتیں عارف حسینی کو شہید کرکے بھی ان کے مشن کو ختم نہ کرسکیں۔ آج کا یہ اجتماع شہید قائد کے مشن کی فتح کا اعلان ہے۔ انہوں نے کہا کہ گلگت بلتستان معدنی وسائل سے مالا مال ہے، حکومت پاکستان ان ذخائر سے فائدہ اٹھائے۔ سی پیک کے ثمرات سے بلاتخصیص سب کو فوائد ملنے چاہییے۔

جنوبی پنجاب کے سیکرٹری جنرل علامہ اقتدار نقوی نے کہا کہ جنوبی پنجاب میں علماء کی بےجا گرفتاریاں اور عزاداری پر قدغن حکومت کی ملت تشیع کے خلاف انتقامی کارروائیوں کا نتیجہ ہیں۔ پاکستان میں جابروں، فرعونوں اور سرکشوں کی کوئی جگہ نہیں۔ ہم ظالموں کے خلاف بلاخوف و خطر اپنی آواز بلند کرتے رہیں گے۔

سندھ کے صوبائی سیکرٹری جنرل علامہ مقصود علی ڈومکی نے کہا کہ طاغوتی طاقتوں کے عزائم خاک میں ملانے کے لئے قائد عارف حسین اپنے کارکنوں کی صورت میں آج بھی زندہ ہیں۔ ضیائی آمریت کے خلاف آواز حق بلند کرنے والے شہید قائد کو سلام پیش کرتے ہیں۔ انہوں نے کہا فوجی عدالتوں کا قیام دہشت گردی کے خاتمے کے لئے عمل میں آیا۔ ان تمام عناصر کو فوجی عدالتوں کے ذریعے سزا ملنی چاہیے، جو معصوم اور بےگناہ جانوں کے ضیاع کا باعث بنے۔

خیبر پختونخوا کے صوبائی سیکرٹری جنرل علامہ محمد اقبال بہشتی نے کہا کہ ڈیرہ اسماعیل خان ملت تشیع کی مقتل گاہ بنا ہوا ہے۔ دہشت گردی سے بچنے والے نوجوانوں کو ریاستی ادارے غائب کر رہے ہیں۔ ہمارا مطالبہ ہے کہ مسنگ پرسنز کو عدالتوں میں پیش کیا جائے، اگر وہ قصور وار ہیں تو انہیں سزا دی جائے۔ مرکزی رہنماء علامہ اعجاز حسین بہشتی نے کہا کہ جو قوم شہداء کو یاد رکھتی ہے، اسے دنیا کی کوئی طاقت شکست نہیں دے سکتی۔