تازہ ترین

رسول اکرم(صلی اللہ علیہ و آلہ)نے چار ذی الحجة دس ہجری کو ذو الحلیفة سے احرام باندھ کر مکہ میں داخل ہوگئے اور اور باب بنی شیبة سے مسجدالحرام میں پہنچ گئے

  • جمعرات, 16 اگست 2018 14:57

شیعہ نیوز(پاکستانی شیعہ خبر رساںادارہ)رسول اکرم(صلی اللہ علیہ و آلہ)نے چار ذی الحجة دس ہجری کو ذو الحلیفة سے احرام باندھ کر مکہ میں داخل ہوگئے اور اور باب بنی شیبة سے مسجدالحرام میں پہنچ گئے، پہلے آپ مسجد کے دروازہ پر کھڑے ہوئے اور خدا کی حمد وثنا بجالائے اور اپنے جد ابراہیم پر صلوات بھیجی پھر حجر اسود کے پاش تشریف لائے اور حجر اسود پر دست مبارک پھیر کر اس کو چوما اور ساتھ مرتبہ خانہ کعبہ کا طواف کیا اور مقام ابراہیم پر دور کعت نماز پڑھی، اس کے بعد آب زمزم کے کنویں کے پاس تشریف لے گئے اور اس کا پانی نوش فرمایا اورعرض کیا: اللھم انی اسئلک علما نافعا و رزقا واسعا و شفاء من کل داء و سقم، پھر حجر اسود پر ہاتھ پھیر کر اس کو بوسہ دیا اور کوہ صفا کی طرف گئے اور اس آیت کی تلاوت فرمائی : ان الصفا و المروة من شعائراللہ فمن حج البیت او اعتمر فلاح جناح ان یطوف بھما۔ کوہ صفا اورمروہ مناسک الہی کی نشانی ہے ، پس جو بھی خانہ خدا کا حج یا عمرہ کرے اس کو صفا و مروہ کا طواف کرنا چاہئے۔اس کے بعد حج کے تمام اعمال بجالائے اور اعمال سے فارغ ہو کر مدینہ کی طرف روانہ ہوگئے، حضرت علی(علیہ السلام)تمام مسلمانوں کے ساتھ پیغمبر اکرم(صلی اللہ علیہ و آلہ)کی خدمت میں موجود تھے یہاں تک کہ غدیرخم پہنچ گئے(۱)۔

۱۔ حوادث الایام، ص ۲۷۴۔

Leave a comment

Make sure you enter the (*) required information where indicated. HTML code is not allowed.