آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ ایران کیساتھ بہتر تعلقات کے خواہاں ہیں، تھنک ٹینک

  • بدھ, 19 جولائی 2017 12:28

شیعہ نیوز (پاکستانی شیعہ خبر رساں ادارہ) عالمی دفاع اور سلامتی کے بارے میں دنیا کے سب سے قدیم خود مختار تھنک ٹینک رائل یونائیٹد سروسز انسٹی ٹیوٹ کی رپورٹ کے مطابق پاک فوج کے سربراہ جنرل قمر جاوید باجوہ عوام میں مقبولیت کی بجائے بین الاقوامی سطح پر سفارتی تعلقات کی بہتری کیلئے کام کر رہے ہیں جبکہ پاک فوج خلیجی ممالک، افغانستان میں اپنی نئی سفارتی کوششوں کے ذریعے ان خدشات کو دور کرنے کیلئے پُرعزم ہے جو اس کے اتحادیوں اور مخالفین نے عائد کیے ہیں۔ موجودہ آرمی چیف نے پاک فوج کی کمانڈ سنبھالنے کے بعد فوری طور پر ایران اور خلیج کونسل کیساتھ تعلقات کی بہتری پر توجہ دی، سربراہ پاک فوج ایران کے دورے پر جائیں گے جس سے دونوں ممالک کے درمیان تعلقات کو فروغ ملے گا، سربراہ پاک فوج نے امریکیوں سے افغانستان کے بارے میں کھل کر بات کی، پاکستانی فوجی قیادت کا افغانستان کیساتھ معذرت خوانہ رویہ اب نہیں رہا۔

رپورٹ میں کہا گہا ہے کہ پاک فوج کے سابق سربراہان جن میں پرویز مشرف، جنرل ریٹائرڈ اشفاق پرویز کیانی زیادہ تر عوامی مقبولیت کے قائل تھے، جس سے یہ تاثر ملتا تھا کہ پاک فوج کو اپنے مرکزی اہداف کے حصول کی بجائے بین الاقوامی سطح پر عوام کے اندر اپنے امیج کو بہتر کرنے میں زیادہ دلچسپی ہے، اس دوران اور پالیسی اور ڈپلومیسی میں واضح تضاد موجود تھا جس میں افغانستان سے متعلق پالیسی اور سعودیوں اور مشرق وسطٰی کیساتھ تعلقات کا معاملہ دوراہے پر تھا جبکہ اکثر ممالک کا یہ خیال تھا کہ پاکستان اپنے کیے گئے وعدوں کی پاسداری نہیں کرتا۔

سربراہ پاک فوج جنرل قمر جاوید باجوہ نے جب نومبر 2016 میں پاک فوج کی کمان سنبھالی تو انہوں نے فوری طور پر ایران اور خلیج کونسل کیساتھ تعلقات کی بہتری پر توجہ دی۔ انہوں نے امریکیوں سے افغانستان کے بارے میں کھل کر بات کی۔ پاک فوج کے سربراہ جنرل قمر جاوید باجوہ نے اپنے پہلے تین دورے سعودی عرب، عرب امارات اور قطر کے کیے جبکہ اب انہوں نے ایران کا دورہ کرنے کا اعلان کیا ہے۔ پچھلے کچھ عرصے میں پاکستان کے جی سی سی ممالک کیساتھ تعلقات مضبوط رہے جبکہ اس کے ایران کیساتھ تعلقات میں کچھ سرد مہری رہی ہے جس کی وجہ پاک ایران بارڈر پر جھڑپوں کا ہونا اور سفارتی طور پر تعلقات میں خلا تھا۔

پاک فوج نے اپنے سربراہ جنرل قمر جاوید باجوہ کی سربراہی میں ایران سے رابطہ کیا اور تہران کو یقین دلایا کہ پاکستان ایران کیساتھ سعودی عرب کے کشیدہ تعلقات کے معاملے کا پُرامن حل چاہتا ہے۔ پاک فوج کے سربراہ جنرل قمر جاوید باجوہ نے متحدہ عرب امارات اور قطر کو بھی حمایت کا یقین دلایا۔ انہوں نے قطر سے دفاعی تعلقات کو مزید فروغ دینے پر بھی بات کی۔ افغانستان کے حوالے سے جنرل قمر جاوید باجوہ نے واضح کیا کہ پاکستانی سرزمین کی حفاظت پاک فوج کی ذمہ داری ہے، افغانستان میں قیام امن کی ذمہ داری پاک فوج کی نہیں بلکہ افغانستان میں قیام امن کی ذمہ داری نیٹو اور افغان نیشنل آرمی کی ہے۔

Leave a comment

Make sure you enter the (*) required information where indicated. HTML code is not allowed.